زیر اثر

Poet: درخشندہ
By: Darakhshanda, Houston

ہولے بدنام زمانہ یونہی تیرے زیر اثر میں
رہے ہم بھی یونہی رہ سفر تیرے زیر اثر میں

بھٹکے یونہی نگر نگر زندگی کے سفر میں
منزل نہ کنارہ چلتے رہے تیرے زیر اثر میں

آگاہی بہت تجھ سے ہی زندگی تیرے سفرمیں
نہ رہی طلب کوی ہمسفر کے زیر اثر میں

دیکھے ہمسفر جو مقید اپنی ہی منزل میں
تنہائ کے اسیر اپنے ہمسفر کے زیراثر میں

چلے ہم قدم با قدم تیرے ساتھ زندگی کےسفرمیں
حق ادا ہوا نہ ہوا گزری تو اپنی بھی تیرے زیر اثرمیں

Rate it:
14 Oct, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Darakhshanda
About me not much to say . Born and raised in Karachi, now living abroad since last 7 to 8 years .In Pakistan has worked in educational institutes . .. View More
Visit 66 Other Poetries by Darakhshanda »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City