شفق کو قید میں رکھا ہے آس تھی کتنی

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

بھلا کسی کی کبھی رنگ و باس تھی کتنی
شفق کو قید میں رکھا ہے آس تھی کتنی

رواں دواں ہوئے خوشبو کے قافلے ہر سو
دیار درد میں آمد کی پیاس تھی کتنی

نہ تم ملو گے نہ میں،ہم بھی دونوں لمحے ہیں
وہ لمحے جا کے جو واپس قیاس تھی کتنی

پتہ چلے جو محبت کا درد لے کے چلو
مرے مکاں کی گلی بھی اداس تھی کتنی

تمہاری رات پہ اتنا ہی تبصرہ ہے بہت
مکیں اندھیرے میں ہیں بد حواس تھی کتنی

گزر گیا جو زمانہ وہ یاد آتا ہے
محبتوں کے فسانہ میں پاس تھی کتنی

کھلے دریچے کے باہر ہے کون سا موسم
کہ آگ بھرنے لگی بے لباس تھی کتنی

خفا ہوئے بھی کسی سے تو کیا کیا وشمہ
بہت ہوا تو رہا دل شناس تھی کتنی

Rate it:
17 Dec, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4533 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City