عام ہر سمت مرے عشق

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, Kuala Lampur

کیسی تقصیریں ہوئی ہیں، کیسی تعزیریں ہوئیں
عام ہر سمت مرے عشق کی تفسیریں ہوئیں

مجھ سے ملنے کے لیے اب تو چلے آؤ صنم
میرے پاؤں میں تو حالات کی زنجیریں ہوئیں

جب سے دیکھا ہے تجھے میں نے سرِ راہ گزر
بس اسی دن سے مرے حُسن کی توقیریں ہوئیں

حاکمِ وقت کبھی تو نے ادھر دیکھا ہے
بےردا خطہ ءِ کشمیر میں ہمشیریں ہوئیں

میں نے غربت میں بھی سیکھا ہے محبت کرنا
تیرے قبضے میں تو نفرت کی یہ جاگیریں ہوئیں

تو نے ہر خط میں مجھے اپنا لکھا تھا شاعر
کیسے محفوظ مرے پاس وہ تحریریں ہوئیں

ہم کو مجبوریءِ دوراں نہ جتا اے وشمہ
اور بھی ترکِ ملاقات کی تدبیریں ہوئیں

Rate it:
16 Feb, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4549 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City