فلسفہ محبت

Poet: رمشا ملک
By: Rimsha Malik, Hyderabad

اک فلسفہ محبت ہے
نم آنکھوں سے جو کہہ دوں میں
یہ رات اندھیری ہو جائے
اور دل سیاہی ہوجائے
اور ہجر کی جلتی شاموں میں
میرے نین یہ جل تھل ہوجائیں
نم آنکھیں مجھ سے کہتی ہیں
اور شکوہ کناں یوں رہتی ہیں
تم دور سہی تھے دور بہت
تم دور ہی رہتے اچھا تھا
اس الفت یک طرفہ سے
میرے دل کا روگ ہی اچھا تھا
اس غم کی گہری آنہوں سے
مجھے پل پل یونہی مرنا تھا
اک کرب سا دل میں اٹھتا ہے
اور چپکے سے یوں کہتا ہے
تم دور سہی تھے دور بہت
تم دور ہی رہتے اچھا تھا

Rate it:
05 Dec, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Rimsha Malik
Visit 2 Other Poetries by Rimsha Malik »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City