ماضی کی کچھ تلخ صدائیں

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, نیویارک

ماضی کی کچھ تلخ صدائیں
اب بھی میں محسوس کروں تو
میرا بکھرا ماضی مجھ کو
سب کچھ یاد دلاتا ہے
جب آنکھوں آنکھوں میں تکتے تھے
پھول کتابوں میں رکھتے تھے
تیری آنکھوں سے پیتے تھے
تیری آنکھوں پر مرتے تھے
منزل کی کوئی فکر نہیں تھی
مستقبل کا احساس نہیں تھا
غم بھی کوئی پاس نہیں تھا
اب بچھڑے تو صدیاں گزریں
تیرے بنا یوں گھڑیاں گزریں
ماضی ہے اب وحشت وحشت
ہر سو پھیلی من میں دہشت
دل میں اب ارمان نہ دھڑکن
مشکل ہے اب زندہ رہنا
نظموں میں اس درد کو کہنا
دل میں تیرے کرب کو سہنا
پھر بھی آس مجھے رہتی ہے
اک دن دونوں مل جائیں تو
دنیا سے پھر کوچ کریں گے !!
وشمہ خان وشمہ

Rate it:
30 Nov, 2014

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: وشمہ خان وشمہ
I am honest loyal.. View More
Visit 4712 Other Poetries by وشمہ خان وشمہ »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City