مجھے شوق شیریں اب نہیں رہا۔

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: Washma Khan Washma, Karachi

مجھ کو تو شوقِ شیریں بیاں اب نہیں رہا
وہ عالمِ جنوں کا سماں اب نہیں رہا

وہ دن تھے تیرے قرب کے لمحوں کی تھی اسیر
موسم حسیں یہ دل بھی جواں اب نہیں رہا

کھلنے لگے ہیں سوچ کے غنچے بہار میں
راہوں میں میری دورِ خزاں اب نہیں رہا

اب جل چکے ہیں آنکھ کی مستی کے سلسلے
بکھری پڑی ہے راکھ ، دھواں اب نہیں رہا

ہر سمت دیکھے موت کے قدموں کے ہیں نشاں
اس زندگی کا مجھ کو گماں اب نہیں رہا

وشمہ وہ میرے درد کا درماں بھی کیا بنے
آنکھوں میں تشنگی کا نشاں اب نہیں رہا

Rate it:
05 Nov, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4549 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City