میری آنکھوں کے رستے، میرے دل میں کبھی آﺅ

Poet: طارق اقبال حاوی
By: Tariq Iqbal Haavi, Lahore

میری آنکھوں کے رستے، میرے دل میں کبھی آﺅ
کچھ میرے من کی سُن لو، کچھ اپنی ہمیں سناﺅ
تم چاند سے، پھولوں سے، کہیں خوبصورت ہو
میرا پہلا ارماں ہو، تم میری ضرورت ہو
مہکا ڈالو من کی کلیاں، اِک بار مسکراﺅ
کچھ میرے من کی سُن لو، کچھ اپنی ہمیں سناﺅ
میری شاعری میں تم ہو، میری گفتگو میں تم ہو
دِل میں دھڑکتے ہو تم، میری جستجو میں تم ہو
یوں اپنے من میں تم بھی، پریت کا دیپ جلاﺅ
کچھ میرے من کی سُن لو، کچھ اپنی ہمیں سناﺅ
کسی سے اس قدر شرمانا، یہ عشق کی ادا ہے
ہم بتائے دیتے ہیں، من میں تمھارے کیا ہے؟
آنکھیں آنکھوں سے پڑھنے دو، تم پلکیں ذرا اُٹھاﺅ
کچھ میرے من کی سُن لو، کچھ اپنی ہمیں سناﺅ
 

Rate it:
05 Nov, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Tariq Iqbal Haavi
میں شاعر ہوں ایک عام سا۔۔۔
www.facebook.com/tariq.iqbal.haavi
.. View More
Visit 144 Other Poetries by Tariq Iqbal Haavi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City