ناکام یک طرفہ محبت

Poet: نعمان احمد عاجز
By: Nouman Ahmad, Frankfurt Am Main

بُہتوں نے دھتکار کر ٹھکرایا پر آہ تک نہ نکلی
جَو تُو نے منع کیا تو جیسے جاں ہی نکل گئ

کچھ ایسی محبت کی داستاں تھی ہماری
کہ زباں فصیح تھی مگر خاموش بیچاری

دل اُسکا وہ دریا تھا کہ سفینہ سب کا پار اُتارا
ہم توکنارہ پہ اُسکے تھے پھر کیوں بہا گیا ہمیں

وصل کی پیاس میں دریائےیار کےسنگ اِتنا بیٹھے
کہ پانی بول اُٹھا کیا بات ہے آپ یہاں کیسے

وہ وہ دریا تھا کہ سب جس سے سیراب ہوتے رہے
ہم وہ ساقی تھے کہ جو ڈوب کر بھی پیاسے رہے

آرزُوئے وصل لئے درِ یار پر اِتنا بیٹھے
کہ نَر گدا بنےرقیب ہمارا حال پُوچھے

دل کی دھڑکن بنی محبوب کے در پر دستک
ہم بنے خُلقِ جاناں کے فقیر، اورصدا لگاتے رہے

تشبہیہ نہ دینا کبھی دل کو ویرا نہ سے عاجز
وہ بھی ایک زماں کبھی آباد ہوا کرتا تھا

Rate it:
11 Jun, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Nouman Ahmad
Visit 3 Other Poetries by Nouman Ahmad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City