نقاب معصومیت کے

Poet: بلبل سفیر)بختاور شہزادی)
By: BAKHTAWAR SHEHZADI, GUJRAT

شدت اتنی تھی کہ ابھی تک لرز رہا ہوں
درد اتنا تھا کہ ابھی تک کانکھ رہاں ہوں
چال ایسی تھی کہ شش جہت کو دشمن پاتا ہوں
ہنستا ایسے ہوں کہ چال ہنسنے کی بھول جاتا ہوں
قنوطیت میں ستائش رب کی ہی پائی میں نے
دغا دیتے ہوئے لوگوں کو فقط دیکھتا رہا ہوں
ضبط ایسا ہے کہ خوشی سب کی چاہتا ہوں
شدتِ آہ میں سکھ دوسروں کے دیکھ رہا ہوں
گرایا ایسے گیا کہ نظریں ملائی نہیں جاتی
ہر آنکھ میں فقط غیظ و غضب دیکھ رہا ہوں
ہاتھ ملانے سے جانے کیوں ڈر جاتا ہوں
ہاتھوں میں ہر شخص کے خنجر لیے دیکھتا ہوں
یقیں ہوتا نہیں کروں کیسے بیاں بلبل
چڑھتے ہوئے دیکھتا ہوں

Rate it:
17 Mar, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: BAKHTAWAR SHEHZADI
Visit Other Poetries by BAKHTAWAR SHEHZADI »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City