وصل

Poet: عدیل
By: Adeel, Lahore

کیوں نا آج اس کے شہر میں جایا جائے
مل بیٹھ کے رنجش کو مٹایا جائے

اس کے نینوں کے کاجل کو پوجا جائے
اس کی زلف کو ہتھیلی سے سہلایا جائے

اس کی قربت سے معطر کریں روح اپنی
اس کے لمس سے جسم کو گرمایا جائے

اس کے لبوں سے نکلتی شیرینی سے
غم دنیا سے پیچھا چھڑایا جائے

اس کی باہوں میں ڈالے اپنی باہیں
ان لمحات کو قیمتی بنایا جائے

اس کی مخمور آنکھوں میں ڈوب کر
شراب کا ایک دور چلایا جائے

اس کے مرمریں جسم کی تراش پر
غزل لکھی جائے، گیت سنایا جائے

 

Rate it:
30 Aug, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Adeel
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City