چشم محب

Poet: palak gopalganjvi
By: imran nazir, gopalganj, India

بڑی حسرتوں سے نہاراتها میں نے
بڑی آرزو سے پکارا تها میں نے
میلے نہ مجهے میرےامید کے شے
جسےخوبدل سے سنواراتهامیں نے

لٹ تو گئی وہ امیدوں کی نگری
چن تو گیا وہ جہان زندگی سے
ہو تو گیا تنہا تنہا سا هر پل
مل ہےکہاں هرخوشی زندگی سے

وہ یادوں کی گلشن میں دیدار کرنا
خود سے بهی زیادہ تجهےپیار کرنا
کبهی جهوم کر ترے باہوں تلےمیں
اپنی محبت کو اظہار کرنا

یادوں میں تری کهویا کهویا سا ہرپل
خیالوں میں تجهکو بلاتا رہا تها
چرا کے تری نازنیں سی ادا سے
دل کے جہاں کو سجاتا رہا تها

یوں آتے ہو خوابوں میں آتےہی رہنا
خیالوں میں گلشن کهلاتے ہی رہنا
کرنا نہ کبهی یادوں میں آنکهیں نم
میرے هم سفر مسکرا تے ہی رہنا

Rate it:
30 May, 2014

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: palak gopalganjvi
Visit 6 Other Poetries by palak gopalganjvi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City