چلو تو زندگی میں ساتھ مل کر چلنے لگتے ہیں

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

چلو تو زندگی میں ساتھ مل کر چلنے لگتے ہیں
گھٹن میں جی لیا ہم نے جو چل کر مرنے لگتے ہیں

ڈسے ہم ہیں، ڈسے تم ہو، مگر دشمن نہیں ملتا
کہیں باہر نہیں یہ سانپ، گھر میں پلنے لگتے ہیں

کوئی پارس نہیں چھوتا، مگر سونا نکلتا ہے
چلو مل جل کے ہم انسانیت میں ڈھلنے لگتے ہیں

ہمیشہ خون کرتے ہیں ہماری آرزوؤں کا
تمناؤں کا نذرانہ طلب یہ مرنے لگتے ہیں

جہاں آدم بنے انساں کہیں ڈھونڈو وہی بھٹی
بنیں ایندھن، ہمارے ساتھ مل کر جلنے لگتے ہیں

یہ اس دورِ کشاکش نے تو یوں رکھا ہے ٹھوکر پر
کہانی سیل غم کی اب سنانے کہنے لگتے ہیں

جو ذہن و دل میں زہریلی ہوا کے تیر چلتے ہیں
تری یادوں کے پتھر بھی مجھے اٹھانے لگتے ہیں
 

Rate it:
03 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4524 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City