کتنے چہرے پہ ڈالے نقاب آدمی

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

کتنے چہرے پہ ڈالے نقاب آدمی
جی رہا ہے یہاں بے حساب آدمی

زندگی میں کبھی دوسروں کے لئے
کاش دیکھے کوئی اک تو خواب آدمی

حق کسی کا کسی کی خوشی چھین کر
کیوں سمجھتا ہے کارِ ثواب آدمی

جس کے دم سے ہی ذلت کا دھبہ لگا
آدمی کا ہے یہ انتخاب آدمی

جان دیتا ہے ارضِ وطن کے لئے
اس وطن کا تو ہے لاجواب آدمی

روزِ محشر کھڑا ہے لئے ہاتھ میں
اپنے اعمال کی اک کتاب آدمی

تھا محبت کا پیکر مگر دیکھ لو
بن گیا ہے یہ وشمہ عذاب آدمی

Rate it:
20 Sep, 2016

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: وشمہ خان وشمہ
I am honest loyal.. View More
Visit 4713 Other Poetries by وشمہ خان وشمہ »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City