کشتی ہے جو دریا میں تو پتوار کہاں ہیں

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, منیلا

کشتی ہے جو دریا میں تو پتوار کہاں ہیں
جینے کے یہاں آج بھی آچار کہاں ہیں

تم حلقہء ہجرت سے نکلتے ہی نہیں ہو
ملنے کے مرے راست دشوار کہاں ہیں

نفرت کی تمازت ست نہ وہ ہم کو جلائے
ہم اہلِ محبت ہیں تو بیکار کہاں ہیں

کب دیکھنے آئیں گے مری آنکھ کا کاجل
برساتِ محبت کے طلبگار کہاں ہیں

بانٹا ہے شب و روز یہاں پیار خزانہ
اس شہر ستم گر میں بھی لاچار کہاں ہیں

جھلسی ہے کئی بار یہاں آتشِ غم میں
وشمہ ترے جینے کے آثار کہاں ہی

Rate it:
01 Jan, 2021

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: وشمہ خان وشمہ
I am honest loyal.. View More
Visit 4713 Other Poetries by وشمہ خان وشمہ »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City