گلہ کیا کرتے ہو ہمارے نہ ملنے کا

Poet: دانش ارشاد
By: Danish irshad, Gojra

گلہ کیا کرتے ہو ہمارے نہ ملنے کا
ہم آوارہ لوگ ہیں ہمارا کوئی ٹھکانہ نہیں

تیری یہ بات بھی جھوٹ ہی نکلی
کہ میرے سوا تیرا کوئی دیوانہ نہیں

ہم سچے عاشق ہیں تیرے تجھے کیا خبر
غلطی سے بھی تو ہمیں آزمانا نہیں

اچھا نہیں لگا ملنے کا یہ انداز تیرا
چھوڑ کے جانے کا یہ تو کوئی بہانا نہیں

چاہے بھلا دینا محبت کی سب یادیں
پر اک احسان کرنا، ہمیں تو بھلانا نہیں

Rate it:
21 Jul, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Danish irshad
Visit Other Poetries by Danish irshad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City