گیارہ تارکین وطن بحیرہ روم میں ڈوب گئے

image

تیونس سے یورپ جانے کی کوشش میں گیارہ مہاجرین بحیرہ روم میں ڈوب گئے ہیں۔

خبر ایجنسی کے مطابق تیونس کے ساحلی محافظوں نے بتایا کہ یہ مہاجرین ایک کشتی میں سوار تھے، جو سمندر کی لہروں کا مقابلہ نہ کر سکی اور ڈوب گئی جس کے نتیجے میں کم از کم 11 افراد ہلاک ہو گئے، ہلاک ہونے والوں میں ایک لڑکی بھی شامل ہے جس کی عمر تقریباً 10 سال تھی۔

تیونس کے ساحلی محافظوں کے حکام نے بتایا کہ انہوں نے بحری جہاز کے تباہ ہونے والے 11 میں سے چار افراد کی لاشیں برآمد کر لی ہیں جو تیونس کے شہر سفیکس کے قریب کرکینا جزائر کے قریب پیش آیا تھا۔

 امدادی کارکنوں نے کشتی میں سوار اکیس افراد کو زندہ بچا لیا، مقامی میڈیا کے مطابق پانچ لاشیں برآمد کی جا چکی ہیں جبکہ لاپتہ افراد کی تلاش جاری ہے۔

ساحلی محافظوں نے کشتی پر سوار 21 افراد کو زندہ بچا لیا ہے۔ عینی شاہدین کے مطابق کشتی بدھ کو 32 تارکین وطن کو لے کر روانہ ہوئی تھی، تمام تیونس کے شہری تھے۔

یاد رہے کہ اقوام متحدہ کے پناہ گزینوں کے ادارے یو این ایچ سی آر کے مطابق، 2021 میں بحیرہ روم اور شمال مغربی افریقہ کے راستے یورپ پہنچنے کی کوشش کے دوران 2500 سے زائد افراد ہلاک یا لاپتہ ہو گئے۔

گزشتہ جولائی میں کم از کم 43 تارکین وطن بحیرہ روم کو عبور کرنے کے لیے نکلنے کے بعد تیونس کے قریب ایک بحری جہاز کے ملبے میں ڈوب گئے۔ مزید 84 افراد کو بچا لیا گیا۔ تیونس کی ہلال احمر نے کہا کہ کشتی مصر، سوڈان، اریٹیریا اور بنگلہ دیش کے تارکین وطن کو لے کر جا رہی تھی۔

Square Adsence 300X250


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
عالمی خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.