پاکستان کو ایک ماہ میں ایک ارب 93 کروڑ ڈالرز سے زائد کا تجارتی خسارہ

image

پاکستان کو رواں برس صرف دسمبر کے مہینے میں ایک ارب 93 کروڑ ڈالرز سے زائد کا تجارتی خسارہ ہوا ہے۔

اسٹیٹ بینک کی ٹوئٹ کے مطابق پاکستان کو رواں مالی سال دسمبر میں ایک ارب 93 کروڑ ڈالر کے تجارتی خسارے کا سامنا کرنا پڑا، نومبر میں یہتجارتی خسارہ ایک ارب 89 کروڑ ڈالر تھا۔

مرکزی بینک نے مزید کہا ہے کہ اقتصادی بحالی کے تمام  تر اقدامات کے دوران رواں مالی سال کی پہلی ششماہی کے دوران پاکستان کا تجارتی خسارہ 9 ارب ڈالر سے تجاوز کرگیا ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ مالی سال کے اسی دورانیئے میں پاکستان کا کرنٹ اکاؤنٹ ایک ارب 25 کروڑ ڈالر سرپلس تھا۔

یہ بھی پڑھیں: پاکستان کو 5 ماہ کے دوران 20 ارب ڈالر سے زائد کا تجارتی خسارہ

ماہرین کا کہنا ہے کہ تجارتی توازن ملک کی معیشت میں سب سے اہم ہے، بڑھتے ہوئے کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کی وجہ سے ملک میں ڈالر  کی قدر 176 اور 177 روپے کے درمیان ہے۔

کرنٹ اکاؤنٹ بیلنس پاکستان کی معیشت کے لیے کلیدی حیثیت رکھتا ہے۔ کرنٹ اکاؤنٹ میں بڑھتے ہوئے خسارے نے مقامی کرنسی پر دباؤ ڈالا ہے جو امریکی ڈالر کے مقابلے میں 176-177 کی سطح کے گرد منڈلا رہی ہے۔

درآمدات کے بڑھتے حجم کے باعث حکومت کو تجارتی خسارے سے نمٹنے اور اس کے اثرات کو کم کرنے میں شدید مشکلات کا سامنا ہے۔

دسمبر میں پاکستان کی درآمدات کا حجم 7 ارب 55 کروڑ ڈالر رہا جب کہ گزشتہ برس دسمبر میں پاکستان نے 5 ارب 79 کروڑ ڈالر مالیت کی اشیا درآمد کی تھیں ۔ اس طرح گزشتہ سال کے مقابلے میں رواں سال ایک ماہ میں درآمدات کا حجم 30 فیصد زیادہ رہا ہے۔

مجموعی طور پر، جاری اقتصادی بحالی کے درمیان تجارتی جھٹکے کی اہم شرائط کی قیادت میں، جولائی تا دسمبر مالی سال 22 میں کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ $9.09 بلین تک پہنچ گیا۔

کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ 21 دسمبر میں 1.93 بلین ڈالر تھا جو 21 نومبر میں 1.89 بلین ڈالر تھا۔

Square Adsence 300X250


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.