اس دل کے موسموں کا شناسا کہیں جسے

Poet: نویدصدیقی
By: نویدصدیقی, Lodhran

اس دل کے موسموں کا شناسا کہیں جسے
کوئی ہو اس جہاں میں کہ اپنا کہیں جسے

تہذیب ِ نو کے باب میں کہنا ہے بس یہی
دراصل تیرگی ہے ،اجالا کہیں جسے

مولا! مرے سخن کو عطا کر وہ بانکپن
اہلِ سخن تمام اچھوتا کہیں جسے

پیدا کر اپنے آپ میں وہ جوہر ِ کمال
اے دوست ! تیری ذات کا گہنا کہیں جسے

ڈھلتا نہیں سخن میں ترا پیکر ِ حسیں
"ایسا کہاں سے لاؤں کہ تجھ سا کہیں جسے"

آیا نہیں ہے شخص کوئی ایسا سامنے
بے ساختہ ہم عکس تمھارا کہیں جسے

وہ بھی ہماری کاہشِ امروز کا ہے پھل
اہلِ زمانہ حاصلِ فردا کہیں جسے

سمجھیں تو خود ہی اپنی تماشائی ہے نوید
کہنے کولوگ چشم ِ تماشا کہیں جسے

Rate it:
20 Feb, 2014

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: Naveed Siddiqui
Visit 19 Other Poetries by Naveed Siddiqui »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City