تو نے سمجھا تھا بچھڑ کے تجھ سے مر جاؤں گا میں

Poet: shahzad hussain sa'yal
By: shahzad hussain sa'yal, Sialkot

تو نے سمجھا تھا بچھڑ کے تجھ سے مر جاؤں گا میں
تو نہیں جو سنگ میرے تو کدھر جاؤں گا میں
تو مجھے گر چھوڑ دے گی تو بکھر جاؤں گا میں
تو جو دریا میں کہے گی تو اتر جاؤں گا میں
میرے دل کو توڑ دالا ہے ارے او بے وفا
اب نہیں میں مانگتا در سے کسی کے بھی شفا
اب جو کہتے ہو یہ لوگوں سے کہ میں ہوں بے وفا
خود بتا کہ بے وفائی کی ملے کس کو سزا
تو نہیں گر جانتی کس کو پتا ہے یہ بتا
فیصلا تیرا جو ہو گا ہو گی میری وہ رضا
جس کو بھی چاہا ہے میں نے وہ ہی نکلا بے وفا
گر یہی انجام الفت ہے تو پھر کیسی سزا
ناخدا تھا عشق کا تو پھر گیا کیوں چھوڑ کے
سارے وعدے سارے ناطے سارے رشتے توڑ کے
دل مرا کیوں توڑ ڈالا اپنے ہاتھوں جوڑ کے
ہاں بہت پچھتایا ہو گا مجھ سے منہ وہ موڑ کے
کچھ ہوس دل میں نہ تھی سا ئل کے تیرے واسطے
پر تجھے بہتر لگے تھے غیر کے ہی راست

Rate it:
29 Oct, 2015

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS
About the Author: shahzad hussain sa'yal
i am a poet from sialkot also doin Bs(IT) from lahore For more poetry just like my page on facebook. Bazm-e-sukhan


thnxxx
.. View More
Visit 25 Other Poetries by shahzad hussain sa'yal »