جواب رانگ نمبر

Poet: Muhammad Hafeez Javed
By: Hafeez Javed, Attock

میں نے لگایا رانگ نمبر کی اس نے ہیلو
کیا سلام، دیا جواب، ہو گئی ہم میں ہیلو ہیلو
کہا کہ میں ابھی بزی ہوں کل کو کرنا کال
مطلب دال میں کالا نہیں، کالی ہے ساری دال
اگلے دن کال لگائی، وہ منتظر جیسے بیٹھی تھی
لپک کے بولی میں ابھی فارغ ہو کے ہی بیٹھی تھی
ایسے لگا صدیوں سے مجھے وہ جانتی ہو
مجھ کو مجھ ہی سے زیادہ وہ پہچانتی ہو
اس کی باتوں کا نشہ تھا یا تھی کوئی ایسی بات
سو نہ سکا میں، کٹ گئی پلکوں میں ساری رات
ہم کو جیسے جیسے لو ہونے لگا
چرچا دھیرے دھیرے ہر سو ہونے لگا
محبت کا تھا عروج ہوئے کئی عہد وفا
پیار ہمارا بڑھا تو بس بڑھتا ہی گیا
محبت کی ہم نے ایسی مثال قائم کرڈالی
گر سوچے کوئی تو زندگی ہی بدل ڈالی
آج جاوید کی آنکھ کا وہ تارا ہے
میرا جیون ساتھی بڑا ہی پیارا ہے

Rate it:
30 Sep, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Hafeez Javed
Visit 14 Other Poetries by Hafeez Javed »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City