حُلیہ کیا بتاؤں میں اپنے جناب کا

Poet: دانش ارشاد
By: Danish irshad, Gojra

حُلیہ کیا بتاؤں میں اپنے جناب کا
بس اتنا سمجھ لو جیسے پھول ہو گلاب کا

توڑ کے دل ہمارا وہ یوں چل دیئے
جیسے کیا ہو کوئی کام ثواب کا

اس کی یاد کے نشے سے جو ملتا ہے
وہ مزہ کہاں ہے شراب کا

گلے، شکوے، شکایت سب کریں گے
ایک دن جو مقرر ہے حساب کا

دل کی بات ہم تو بتا چکے اسے
بس انتظار ہے اب اسکے جواب کا

Rate it:
21 Jul, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Danish irshad
Visit Other Poetries by Danish irshad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City