دستِ دعا سے ایک پھول کا بِکھر جانا

Poet: احسِِن فیاض
By: Ahsin Fayaz, Badin

دستِ دُعا سے ایک پھول کا بِکھر جانا
راس آیا نہ جِسے کبھی یوں اُجڑ جانا،

میں تیری زندگی کا وہ ساکن لمحہ ہوں،
کے برف بن جانا اور رگوں میں اُتر جانا

جنونِ عشق کے یہ تھا سِلا میری بدگمانی کا،
ہر اشک راٸیگاں ہونا ہر دعا بے اثر جانا

لوٹ آؤ کے عقیدت ہے تیرے فریب سے،
پھر سے لوٹ جانا تم پھر سے مکر جانا

یہ لمحہ بھی کبھی عنایت کیا شبِ فراق نے،
آنسوں سے اثر جانا ہونٹوں سے صبر جانا

میرے نصیبوں میں احسِن آیا ہی نہیں ہٙوا ہونا،
لبوں پے ٹھہر جانا لٹکِ یار سے گذر جانا

Rate it:
24 Feb, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ahsin Fayaz
Visit 31 Other Poetries by Ahsin Fayaz »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City