ربط

Poet: Hazik Ali
By: Hazik Ali, Multan

بات کب کی ختم ہوئی بس اک ربط وابستہ ہے
کہ میرے گھر کو جاتا اٗسکی گلی سے رستہ ہے

احباب بھی خفا ہیں اب تو اٗسے لے کر ہم سے
پر کیا کروں دلِ نادان کی حالت بڑی خستہ ہے

زرا پوچھا ہوتا تونے اے ظالم سہیلیوں سے اپنی
کیسا دکھتا ہے جسکے کاندھے پے تیرا بستہ ہے

یوں تو کئی بار کہہ چکا ہوں دوستوں سے اپنے
کہ اب نہیں بلاؤں گا کیا میرا ضمیر اتنا سستا ہے

مزاق اڑاتے ہیں کم بخت مل کے محفل میں میرا
کون سمجھائے عشق کا سانپ ایسے ہی ڈستا ہے

حازق کیا دن تھے وہ زرا یاد نہیں مجھے اب تو
پر آج بھی میرے اداس چہرے میں وہ ہنستا ہے

معمول تھوڑی تھا جو قصہ پٗرانا کردوں خود میں
جس قلب کو میں نے نہیں دیکھا وہ وہاں بستا ہے

Rate it:
16 Mar, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Hazik Ali
Visit 13 Other Poetries by Hazik Ali »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City