مجھ سے دِکھا یہ گیا نہ مجھ سے بتایا گیا

Poet: احسن فیاض
By: Ahsin Fayaz, Badin

مجھ سے دِکھا یہ گیا نہ مجھ سے بتایا گیا
درد ایک میراث تھا بــــــــــــــس اُٹھایا گیا

بے ساکھی کے میری گرد پہلے بھی تھے تماشائی
چارپائی پے بھی تماشہ، پھر مجھے سُلایا گیا

سُخنِ باطـــل پے تھی رواں محفل کی داد
ذکرِ حـــــــــــــــق پے اُسے واپس بُلایا گیا

تیرے زخمِ جگر کے نصیب میں تھا یہ نقاب
زخم تھا کچھ دیر عیاں پھر نہ دکھایا گیا

تم نے تو نزاکت سے چھین لی پھول سے خوشبؤ
میری آنکھ سے وہ منظر مِٹائے نہ مِٹایا گیا

درد تھا ہم دونوں کے حصے کا ورثہ احسِن
مجھے بھی نوچا گیا اسے بھی ستایا گیا

Rate it:
03 Apr, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ahsin Fayaz
Visit 31 Other Poetries by Ahsin Fayaz »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City