محبت کے سوا تو مجھے کچھ آتا بھی نہیں ہے

Poet: Syed Farrukh Imdad
By: Syed Farrukh Imdad, Lahore

محبت کے سوا تو مجھے کچھ آتا بھی نہیں ہے
تیرے بعد اب کوئی اور مجھے بھاتا بھی نہیں ہے

اک شخص میرے گھر کی چوکھٹ پہ کھڑا ہے
اندر بھی نہیں آتا اور لوٹ کے جاتا بھی نہیں ہے

وہ میرا ہے اور میرا ہی رہے گا تاحیات
اور آنکھ وہ کسی اور سے ملاتا بھی نہیں ہے

عشق عاشق کو بنا دیتا ہے عبرت کا نشان
یہ دفن بھی نہیں کرتا اور جلاتا بھی نہیں ہے

تصویر نہیں بھیجی اور ملنے سے بھی ہے گریز
تو خود کو میرے سامنے لاتا بھی نہیں ہے

تیری آنکھوں کی خاموش سی گفتگو میں آگیا
ورنہ فرخ کسی کی بات میں آتا بھی نہیں ہے

Rate it:
28 Aug, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Farrukh Imdad
Visit 12 Other Poetries by Syed Farrukh Imdad »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City