محبت

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

آواز دے کر آج یہ کس نے بلا لیا
بجھتا ہوا چراغ تھا پھر سے جلا لیا

مانند اک شجر کے کبھی میں کھڑا تھا جو
دیمک کی مثل مجھ کو محبت نے کھا لیا

ہم نے جو ان کا نام لیا کیا گناہ کیا
کیوں ہاتھ میں سبھی نے ہے پتھر اٹھالیا

جیتے جی ہم سے آکے کبھی مل نہ وہ سکا
کاندھے پہ آج اس نے جنازہ اٹھالیا

حجت تھیں جتنی درمیاں وہ بھی ختم ہوئیں
سینے سے اپنے آج جو ہم کو لگا لیا

ایسا تھا وہ چراغ جو طوفاں سے لڑ گیا
اس کو خود اپنے گھر کی ہوا نے بجھا لیا

کل تک جہاں تھے ڈیرے محبت کے ہر جگہ
نفرت نے آج اس کو ٹھکانہ بنا لیا
 

Rate it:
15 Jan, 2020

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 208 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City