ماحولیاتی تبدیلی: 50 ڈگری سینٹی گریڈ پر زندگی جو جانوروں کی بھوک بھی مار دیتی ہے

راجستھان کا جیسلمیر ضلع انڈیا کے گرم ترین علاقوں میں سے ہے۔ یہاں ان دنوں درجہ حرارت 47، 48 ڈگری سینٹی گریڈ تک رہتا ہے۔ کئی مقامات پر دن کے اوقات میں درجہ حرارت 50 ڈگری کو بھی چُھو لیتا ہے۔
پانی
BBC

انڈین ریاست راجستھان میں جیسلمیر کے کنوئی گاؤں سے دو کلومیٹر کی دوری پر درجنوں عورتیں ایک ویران مقام پر کنویں سے اپنے گھڑوں میں پانی بھر رہی ہیں۔ ان میں سے کئی خواتین پانی لینے کے لیے تین سے چار کلومیٹر کا فاصلہ پیدل طے کر کے یہاں پہنچی ہیں۔

اس علاقے میں موجود درجنوں کنویں پہلے ہی سوکھ چکے ہیں اور اگر جلد ہی بارش نہ ہوئی تو وہ کنویں بھی سوکھ جائیں گے جن میں پانی تو ہے مگر اس کی سطح کافی گِر چکی ہے۔

کنوئی گاؤں میں پانی حاصل کرنا ایک صبر آزما کام اور روز مرہ کی جدوجہد کا حصہ ہے۔

راجھستان کا ضلع جیسلمیر مغرب میں پاکستان کی سرحد کے نزدیک واقع ہے۔ اِن دنوں یہ پورا خطہ شدید گرمی کی زد میں ہے۔ رواں برس گرمی کی لہر اپریل سے ہی شروع ہو گئی ہے۔ یہ ریگستانی علاقہ ہے اور عام دنوں میں بھی یہاں پانی کی قلت رہتی ہے مگر شدید گرمی نے صورتحال اور بھی مشکل کر دی ہے۔

یہ بھی پڑھیے

اے سی کے بغیر آپ اپنے گھر کو ٹھنڈا کیسے رکھ سکتے ہیں؟

پاکستان میں ہیٹ ویو کی پیشگوئی: شدید گرمی کی لہر ہمارے جسم کو کس طرح متاثر کرتی ہے؟

شدید گرمی میں رات کی نیند بہتر کرنے میں مددگار دس مشورے

کیا سفید چھتیں درجۂ حرارت کم کر سکتی ہیں؟

ماحولیاتی تبدیلی کے باعث اس خطے میں گرمی کی شدت بڑھتی جا رہی ہے۔ محکمہ موسمیات کی جانب سے پہلے ہی وارننگ دی جا چکی ہے کہ آنے والے دنوں میں جیسلمیر اور اس کے اطراف کے اضلاع میں گرمی کی شدت اور بھی بڑھ جائے گی۔

انڈیا
BBC

اپنی اونٹ گاڑی میں لگے ٹینکر میں پانی بھرتے ہوئے کنویں پر موجود منوہر رام نے بتایا کہ ’کنویں کے اطراف میں تین سے چار کلومیٹر کی دوری پر کئی چھوٹے چھوٹے گاؤں واقع ہیں۔ وہاں پانی نہیں ہے۔ یہ عورتیں سارا دن پانی کے لیے یہاں آتی رہتی ہیں۔ اُنھیں کئی کئی بار یہاں آنا پڑتا ہے اور جب کنویں میں پانی کم ہونے لگتا ہے تو پانی کے حصول پر لڑائیاں بھی ہوتی ہے۔‘

راجستھان کا جیسلمیر ضلع انڈیا کے گرم ترین علاقوں میں سے ہے۔ یہاں ان دنوں درجہ حرارت 47، 48 ڈگری سینٹی گریڈ تک رہتا ہے۔ کئی مقامات پر دن کے اوقات میں درجہ حرارت 50 ڈگری کو بھی چُھو لیتا ہے۔

پانی
BBC

بیشتر لوگ اپنا کام صبح یا شام میں کرتے ہیں کیونکہ دن میں گرمی ناقابل برداشت ہو جاتی ہے۔

میں ایک دوپہر میں کھا بیا نام کے ایک گاؤں میں تھا۔ پورا گاؤں سنسان پڑا تھا۔ میں نے دن میں ساڑھے 12 بجے کے قریب وہاں کا درجہ حرارت دیکھا تو وہ 49 ڈگری سے زیادہ تھا۔ دو بجے تک اس میں مزید شدت آ گئی تھی۔ یہاں کی ریتیلی زمین تپ رہی تھی اور سورج کی تمازت انتہائی شدید تھی۔ اوپر سے گرم لُو کے تھپیڑے زندگی کو انتہائی مشکل بنا رہے تھے۔

بیشتر مکان اسی علاقے سے نکلنے والے پتھروں کے بنے ہوئے ہیں۔ حدت کم کرنے کے لیے بہت سے لوگوں نے اپنے گھروں کی دیواروں پر گائے کے گوبر کا لیپ کر رکھا ہے اور چھت کے نیچے لکڑی کی کڑیاں لگا رکھی ہیں۔

پانی
BBC

جیسلمیر کے دیہی علاقوں میں زندگی مویشی پالنے اور کھیتی باڑی پر منحصر ہے۔ پانی نہ ہونے سے زمین سوکھی پڑی ہے۔ سخت گرمی میں مویشیوں کی حالت انسانوں سے بھی بُری ہے۔ دور دراز کے ایک گاؤن جیٹھاوی کے ایک کسان احمد خان نے بتایا کہ شدید گرمی کی وجہ سے وہ سورج نکلنے سے پہلے ہی اپنی بکریوں کو لے کر چراگاہوں کی تلاش میں نکل جاتے ہیں۔

’دن میں اتنی گرمی ہو جاتی ہے کہ یہ چل بھی نہیں سکتیں۔ ریت گرم ہو جاتی ہے، بکریوں کی سانس پھولنے لگتی ہے۔ جہاں درختوں کا سایہ ملتا ہے یہ وہیں کھڑی ہو جاتی ہیں۔ ان کی بھوک مر جاتی ہے۔ ایک دو بجے تک یہ چلنے پھرنے سے قاصر ہو جاتی ہے۔ یہاں سوکھا پڑا ہے۔ اگر بارش نہ ہوئی تو ہم اِنھیں ہریانہ ریاست کی طرف لے کر چلے جائیں گے کیوںکہ یہاں کھانے کے لیے کچھ نہیں بچے گا۔‘

پانی
BBC

جیسلمیر کے کئی سو کلومیٹر کے رقبے میں موجود بیشتر تالاب سوکھ چکے ہیں۔ پیڑ پودے دھوپ کی شدت سے جل گئے ہیں۔ گائے، بکریاں اور بھیڑیں بے چین ہیں اور پانی کی تلاش میں ماری ماری پھر رہی ہیں۔ ماحولیاتی تبدیلی سے یہ خطہ اب پہلے سے زیادہ گرم ہونے لگا ہے جبکہ بڑے پیمانے پر جگہ جگہ پتھروں کی کانکنی سے پانی کا قدرتی نظام بھی بگڑ گیا ہے۔

جاجیا گاؤں کے حکم سنگھ راٹھور ایک سابق فوجی ہیں۔ اب وہ اپنے گاؤں میں کاشتکاری اور مویشی پالتے ہیں۔ ان کا سارا وقت اپنے جانوروں کے لیے چارے اور پانی کے انتظام کے تناؤ میں گزرتا ہے۔

وہ کہتے ہیں کہ جگہ جگہ پتھروں کی کھدائی سے پانی یہاں تک نہیں آ پاتا۔

’پہلے تھوڑی سی بھی بارش ہوتی تھی تو ان کھیتوں میں پانی آ جاتا تھا۔ مئی جون میں ان مویشیوں کے لیے پینے کے پانی کا انتظام ہو جاتا تھا۔ جیسلمیر شہر میں اگر پانچ، چھ ملی میٹر بھی بارش ہوتی تو پانی یہاں تک پہنچ جاتا تھا۔ یہ پہاڑی علاقہ ہے۔ یہاں کی زمین پتھریلی ہے۔ لیکن جگہ جگہ پتھر کی کھدائی سے اب پانی یہاں نہیں پہنچ پاتا۔ اس سے یہاں کے تالاب اور گڑھوں میں بھی پانی کی کمی ہونے لگی ہے۔‘

مزید پڑھیے

ماحولیاتی تبدیلی اور نقل مکانی پر مجبور پاکستانی، ’وہ موسم جب آسمان سے مردہ پرندے زمین پر گرتے ہیں‘

وہ علاقے جہاں گرمی سے دن میں کام مشکل اور رات میں نیند حرام

کیا دنیا پانی پر جنگ کی طرف بڑھ رہی ہے؟

حکومت نے پانی کے لیے دیہی علاقوں میں پائپ بچھائے ہیں لیکن وہ گرمی کی شدت سے اکثر جگہ جگہ پھٹ جاتے ہیں یا ان میں ہوا بھر جاتی ہے۔ یہ سپلائی بھی ضرورت کے لحاظ سے ناکافی ہے۔

پانی
BBC

جاجیا گاؤں کی چندریکا راٹھور کہتی ہیں جب بھی کوئی نئی حکومت آتی ہے تو یہاں یہ امید پیدا ہوتی ہے کہ اس خطے میں بھی تبدیلی آئے گی، لیکن یہاں برسوں سے زندگی میں کوئی خاص تبدیلی نہیں آئی ہے۔

’وقت کے ساتھ کچھ تبدیلی آئی ہے لیکن اس حد تک نہیں جتنی باقی ملک میں۔ آج بھی ہمارے گاؤں میں بنیادی مسئلے برقرار ہیں۔ یہاں پانی کا مسئلہ ہے، کھانے کا مسئلہ ہے، مویشیوں کے لیے چارہ نہیں ملتا۔ جب برسات نہیں ہوتی تو جو تالاب وغیرہ ہیں وہ بھی خالی ہو جاتے ہیں، تو مسئلہ اور بھی گمبھیر ہو جاتا ہے۔‘


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
پاکستان کی خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.