انڈین مسافر طیارے کی کراچی میں: ’امید ہے مسافروں کی انڈین ٹیم جیسی مہمان نوازی ہوئی ہو گی‘

گذشتہ روز پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی کے بین الاقوامی ہوئی اڈے پر ہنگامی لینڈنگ کرنے والے انڈین طیارے کے مسافروں کو متبادل طیارہ لے کر دبئی پہنچ گیا۔

انڈیا اور پاکستان کے درمیان دوریاں اتنی بڑھ چکی ہیں کہ اب فاصلے کم ہونے کی امید رکھنے والے بھی کچھ زیادہ پرامید دکھائی نہیں دیتے۔

ایسے میں دونوں ملکوں کی عوام محبتیں ڈھونڈنے کے لیے کبھی کوک سٹوڈیو کے گانے کا سہارا لیتے ہیں یا پھر پاکستان میں کسی انڈین طیارے کی لینڈنگ کا۔۔۔ جی ہاں! صحیح پڑھا آپ نے۔

گذشتہ روز پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی کے بین الاقوامی ہوئی اڈے پر لینڈ کرنے والے انڈین طیارے کے مسافروں کو متبادل طیارہ لے کر دبئی پہنچ گیا۔

تاہم خراب طیارہ اب بھی کراچی ایئرپورٹ پر ہے اور انڈین انجینیئرز کا منتظر ہے۔

پاکستان سول ایوی ایشن اتھارٹی کے ترجمان کے مطابق 'سپائیس جیٹ' کمپنی کا متبادل طیارہ شام کو ممبئی سے کراچی پہنچا تھا اور مسافروں کو لے کر دبئی روانہ ہوگیا تھا۔ متاثرہ طیارے میں 132 مسافر اور 12 عملے کے لوگ شامل تھے۔

ترجمان کے مطابق 'انڈین مسافر طیارہ انجن خرابی کے باعث اجازت ملنے پر منگل کی صبح جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر اترا تھا، جس کے بعد طیارے میں موجود مسافروں کو کھانے پینے کی اشیا پہنچا دی گئی تھیں۔ شام کو پانچ بجے کے بعد ممبئی سے طیارا کراچی پہنچا۔

دوسری جانب انڈین سول ایوی ایشن کے ڈائریکٹر نے انڈین میڈیا کو بتایا ہے کہ 'منگل کو سپائس جیٹ کی دہلی-دبئی پرواز کو کراچی کی طرف موڑ دیا گیا کیونکہ ایندھن کے اشارے میں خرابی شروع ہوگئی تھی۔'

انڈین سول ایوی ایشن کے حکام کے مطابق 'بوئنگ 737 میکس طیارہ جو دہلی سے دبئی کی طرف جا رہا تھا اس نے اپنے بائیں ٹینک سے غیر معمولی ایندھن کی مقدار میں کمی کے باعث، اس طیارے کا رخ کراچی کی طرف موڑنا پڑا۔

https://twitter.com/flyspicejet/status/1544237049414586369?s=20&t=mlqdyxY_rXOnGVnGiBheOA

دوسری جانب سپائس جیٹ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ 'پانچ جولائی کو، SpiceJet B737 ہوائی کو انڈیکیٹر لائٹ کی خرابی کی وجہ سے کراچی کی طرف موڑ دیا گیا تھا۔ طیارہ بحفاظت کراچی پہنچ گیا اور مسافروں کو بحفاظت اتار لیا گیا۔'

یاد رہے کہ فروری 2019 میں انڈیا کی بالاکوٹ میں مبینہ ’سرجیکل سٹرائیک‘ کے بعد پاکستان نے انڈین طیاروں کے لیے اپنی ایئر سپیس بند کردی تھی اور پانچ ماہ کی بندش کے بعد اسے دوبارہ کھولا گیا تھا۔

دہلی اور ممبئی سے خلیجی ممالک کی طرف جانے والے انڈین طیارے اس سے قبل بھی کراچی میں ہنگامی لینڈنگ کرتے رہے ہیں۔

سپائس جیٹ کا طیارہ کراچی ایئرپورٹ پر موجود ہے، سول ایوی ایشن اتھارٹی کے ترجمان کے مطابق پی آئی اے کے انجنیئر نے بھی طیارے کا معائنہ کیا تاہم انڈین سے کمپنی کے ماہرین اس کی مرمت کریں گے۔

یہ بھی پڑھیے

’لوگوں نے شور مچایا کہ جہاز آ رہا ہے، اس میں سے دھواں نکل رہا ہے‘

پاکستان میں ہونے والے فضائی حادثات کی تاریخ

دنیا کے سب سے بڑے جہاز نے کراچی ائیرپورٹ پر 21 گھنٹے کیوں گزارے؟

طیارہ حادثے کے آخری لمحات، اہم سوالات اور ان کے ممکنہ جوابات

سپائس جیٹ کی جانب سے کی گئی سلسلہ وار ٹویٹس کے بعد اکثر انڈین صارفین کمپنی کے معیار کے حوالے سے سوال اٹھاتے دکھائی دیے۔

ایک صارف نے لکھا کہ ’یہ پریشان کر دینے والی بات ہے۔ گذشتہ 15 روز میں یہ تیسرا واقعہ ہے، میں نے 12 جولائی کو کمپنی کے ایک طیارے میں سفر کرنا ہے اور مجھے گھبراہٹ ہو رہی ہے۔‘

ایئر لائن کی جانب سے ایسے کئی صارفین کو تحفظ کی یقین دہانی کروائی گئی۔

پاکستانی صارف امان اللہ نے لکھا کہ ’یہ مسافر نہیں اللہ کی طرف سے بھیجے گئے مہمان ہیں تاکہ ہم ان کی مہمان نوازی کر سکیں۔‘

شیو نامی ایک صارف نے لکھا کہ ’جب انڈین کرکٹ ٹیم نے 2005 میں پاکستان کا دورہ کیا تھا تو انھیں عمدہ مہمان نوازی اور غیر متوقع محبت ملی تھی۔ امید ہے مسافروں کے ساتھ بھی ایسا ہی سلوک روا رکھا گیا ہو گا۔‘


News Source   News Source Text

مزید خبریں
تازہ ترین خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.