نسوار کو پاکستانی برانڈز میں شامل کرنے کی تجویز پیش

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے تجارت کے اراکین نے نسوار کو پاکستانی برانڈز میں شامل کرنے کی تجویز دے دی۔

وزارت تجارت کے حکام کا کہنا ہے کہ پشاوری چپل، سوہن حلوہ، باسمتی چاول سمیت دیگر پاکستانی مصنوعات کو دنیا بھر میں متعارف کرانے کے لیے جغرافیائی قانون تیار کر لیا گیا ہے۔

کمیٹی اجلاس میں چیئرمین آئی پی او مجیب احمد خان نے جغرافیائی انڈیکیشن رجسٹریشن اینڈ پروٹیکشن بل 2019 پر بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ جغرافیائی قانون میں 80 قومی اور علاقی مصنوعات اور سروسز کی فہرست مرتب کی ہے جس کو جغرافیائی قانون کے تحت رجسٹرڈ کیا جائے گا۔

سینیٹر شبلی فراز نے کہا کہ بتایا جائے آئی پی او جغرافیائی قانون بنانے میں کیوں تاخیر ہوئی؟

خریدارہوجائیں تیار،سیل لگ گئی ہے!انہوں نےکہا کہ نسوار کو لسٹ میں شامل کیا ہے؟ اسے بھی لسٹ میں شامل کیا جائے گا۔

سینیٹ میں نسوار کو برانڈز میں شامل کئے جانے کی تجویز پر کمیٹی ممبران ہنسنے لگے۔

جغرافیائی انڈیکشن رجسٹریشن اینڈ پروٹیکشن بل2019کی منظوری 15روز تک موخر کر دی گئی۔

وزارت تجارت کے حکام نے بتایا کہ رواں مالی سال وزارت تجارت کے لیے11 ارب 8 کروڑ کا بجٹ مختص ہے، کفایت شعاری کے باعث دبئی ایکسپو 2020 میں شرکت نہ کرنے کا خدشہ تھا، اب دبئی ایکسپو میں شرکت کا فیصلہ کیا ہے۔

حکام نے بتایا کہ دبئی ایکسپو میں شرکت کے لیے 2 کروڑ 30 لاکھ ڈالر حکومت فراہم کرے گی۔


 

WATCH LIVE NEWS

Samaa News TV PTV News Live Express News Live 92 NEWS HD LIVE Pakistan TV Channels

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.